رمضان کےاکیسویں دن کی دعا کے پیغامات اور تشریح

اَللَّهُمَّ اجْعَلْ لِي فِيهِ إلَي مَرْضَاتِكَ دَلِيلاً

پروردگار مجھے ایسے راستے پر لگا دے جس سے تو راضی ہو۔ اگر خدا کی رضایت دیکھنی ہے تو سب سے پہلے یہ دیکھیں کہ ہم کتنے خدا سے راضی ہیں۔ جتنے ہم خدا سے راضی ہوں گے اتنا ہی خدا ہم سے راضی ہوگا۔ اگر ہمارے دل میں یہ گلہ ہے کہ خدا نے مجھے فلاں چیز نہیں دی لیکن دوسرے کو دی ہے  یعنی ہم خدا سے راضی نہیں جان لیں کہ خدا بھی ہم سے راضی نہیں۔

  سوال: کیوں خدا نے بہت سی چیزیں ہمیں عطا نہیں کی؟

روایت میں ارشاد ہے کہ ہماری مثال بیمار جیسی اور پروردگار طبیب جیسا۔

 اگر ہم ہسپتال جائیں تو دیکھیں گے ایک ڈاکٹر کے چند بیمار ہیں وہ ہر ایک کو الگ الگ دوائی تجویز کرتا ہے کسی کو پرہیزی کھانا دیتا ہے تو کسی کو گرم گرم کھانا کسی کو میٹھا کھانے سے منع کرتا ہے تو کسی کو میٹھا کھانے کا کہتا ہے لیکن کوئی بیمار اپنے ڈاکٹر سے شکایت نہیں کرتا بلکہ اس کا شکر گزار ہوتا ہے۔ بیمار جانتا ہے کہ یہ نسخہ اس کی بہتری کے لیے ہے۔

اگر ہم خدا کی معرفت حاصل کرلیں تو کبھی بھی اس سے گلہ شکوہ نہیں کریں گے۔ بلکہ ہر چیز میں خدا کا شکر ادا کریں گے چاہے وہ  غم ہو یا خوشی اور اس کی بہترین مثال حضرت  زینب سلام اللہ علیہا کی ذات ہے جو اتنی مصیبتیں سہہ کے بھی فرما رہی ہیں مارایت الا جمیلا ہم نے خوبصورتی کے سوا کچھ نہیں دیکھا کیونکہ انہوں نے  ان مصیبتوں کو مصیبت نہیں بلکہ اپنے درجات کی بلندی کا راستہ سمجھا اور خدا کا شکر ادا کرکے اپنے مقام کو بلند تر دیا۔                                                

وَ لاَ تَجْعَلْ لِلشَّيْطَانِ فِيهِ عَلَيَّ سَبِيلاً

 خدایا شیطان کو اس مہینے اور ہر مہینے میں ہم سے دور فرما۔

اگر ہم چاہتے ہیں کہ شیطان ہمارے اندر نفوذ نہ کرے تو ہمیں کیا کرنا چاہیے؟

حدیث میں ارشاد ہوا ہے تین گروہ ایسے ہیں جن کا شیطان کچھ نہیں بگاڑ  سکتا۔

جو ذکر خدا کرتے ہیں۔

 سحر کے وقت استغفار کرتے ہیں۔

 خوف خدا سے گریہ کرتے ہیں۔

 اور ماہ رمضان وہ مہینہ ہے جس میں ہمیں زیادہ سے زیادہ ذکر خدا اور سحری کے وقت سے فائدہ اٹھانے کی توفیق ملی ہے۔

وَ اجْعَلِ الْجَنَّهَ لِي مَنْزِلاً وَ مَقِيلاً يَاقَاضِيَ حَوَائِجِ الطَّالِبِينَ

 

 خدایا جنت کو ہماری منزل قرار دے خدا سے دعا کریں کہ ہمارا ایمان پر خاتمی ہو اور اہل ایمان اس دنیا سے جائیں تاکہ شفاعت ہمارے شامل حال ہو اور اہل جنت سے قرار پائیں۔